معاف کرنا صاحب۔۔دل والے دلہنیالےجائیں گے

آج کل پاکستان کی بری فوج کے نئے سربراہ کولیکر الیکٹرانک اورسوشل میڈیاپہ بڑی بےچینی پھیلی ہے ۔۔ ایسا پہلی مرتبہ نہیں،ہربار ہی آرمی چیف کی تبدیلی کےوقت اسی طرح کی صورتحال کاسامناکرناپڑتا ہے ۔۔ فرق بس اتنا ہے کہ اس بارنئے چیف کےچناؤمیں باقی سٹیک ہولڈرزکی طرح الیکٹرانک میڈیابھی  حصہ دار بناہوا ہے ۔۔۔ دائیں وبائیں بازو(خودساختہ اصطلاح،مطلب حکومت نوازاورمخالف) کے چینلزپہلے توسیع کےمعاملےپہ متحرک رہے ، تواب نئےچیف کےنام پہ اپنے اپنے مشورےدےرہے ہیں(بلکہ منوانےپہ بضدبھی ہیں شائد)۔۔

اس وقت چارنام نئے آرمی چیف کےلیے زیرغور ہیں ۔۔۔

لیفٹننٹ جنرل زبیرمحمودحیات

لیفٹننٹ جنرل اشفاق ندیم

لیفٹیننٹ جنرل جاویداقبال رمدے

لیفٹننٹ جنرل قمرجاویدباجوہ

سینیارٹی لسٹ میں سب سے اول لیفٹننٹ جنرل زبیرمحمودحیات ہیں اور کیاہی مزے کی بات ہےکہ یہ نئےآرمی چیف کےلیے سب سے کم فیورٹ ہیں ۔۔۔ دوسرے نمبر پہ لیفٹننٹ جنرل اشفاق ندیم جبکہ جنرل جاویداقبال رمدے تیسرے نمبر پہ ہیں ۔۔ فہرست کے آخری نام کی بات بعدمیں،پہلے ان دونوں کے متوقع چانسزدیکھ لیتے ہیں۔۔۔ مختلف میڈیارپورٹس اور سوشل میڈیاپہ گردش کرتےالفاظ سے پتہ چلتا ہے کہ ایک کو موجودہ (جلد ہی سابقہ ہونےوالے)آرمی چیف کی جبکہ دوسرے کو موجودہ (دوہزار اٹھارہ تک موجود)وزیراعظم کی درپردہ تائیدحاصل ہے ۔۔

ایک مختلف اہم امورمیں آرمی چیف کے معاون اور کامیابی کی وجہ رہے تو دوسرے سے وزیراعظم کے خاندانی مراسم ہیں۔۔۔

تقریباسبھی جگہ ان دونوں کی تقرری کےامکانات زیادہ ظاہرکیے جارہے ہیں ۔۔۔ مگر شائدایسا ہونے نہیں والا۔۔۔۔

جنرل اشفاق ندیم کوتقرری کی فہرست سے نکالنے کےلیے ایک خفیہ مہم بھی شروع کردی گئی ہے جس کےتحت ان کوقادیانی ثابت کرنے کی کوشش کی جارہی ہے۔۔۔ اس الزام میں حقیقت ہے یا نہیں،البتہ اتناضرور ہے کہ ان کو مشکوک بہرحال کردیاجائیگا تاکہ ان کو تقرری کی دوڑسے نکالا جاسکے۔۔۔۔

دوسری جانب جنرل رمدے بھی لاکھ خواہش کےباوجود شائد ‘‘جادوکی چھڑی’’حاصل نہ کرسکیں کہ ان کو مقررکرنے میں جولعن طعن ملےگی اس سے تو بہتروزیراعظم اپنے بیٹے کو ہی آرمی چیف بنادیں۔۔۔کیوں کہ‘‘قیمت  ’’ تو اتنی ہی ہے۔۔۔

آخرمیں بچے جناب قمرجاویدباجوہ،تو موجودہ حالات میں ان کی لاٹری بھی نکل سکتی ہے (ماضی میں بھی یہی روایت رہی ہے ،،بالکل جنرل پرویزمشرف توچارسینئرجنرلزکوپھلانگتےہوئے آرمی چیف بنے تھے)۔ میاں صاحب کوویسے بھی احسان کرنے کی عادت ہے۔۔وہ بھی ان سے جن سے مناسب بدلہ لیاجاسکے ۔۔۔ انہیں ہمیشہ اپنےلیے سعادت مندافرادکی ضرورت رہتی ہے تاکہ امورمملکت چلانے میں کوئی دقت پیش نہ آسکے۔۔اللہ پوچھے پرویزمشرف سے،جس نے احسان کا بدلہ اس طرح دیا،ورنہ تین چوتھائی مینڈیٹ والے میاں صاحب اسلامی نظام خلافت بحال کرکےامیرالمومنین بن چکے ہوتے۔۔۔

ماضی کی روایات اورمیاں صاحب کے شوق کومدنظررکھتے ہوئے قرین قیاس ہے کہ اس مرتبہ بھی دوڑمیں سب سے پیچھےوالاہی بازی لےجائیگا۔۔۔

 

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s