پی ایس ایل ۔۔۔۔۔جاری تھی ۔جاری رہیگی

پاکستان  میں کرکٹ کاآغاز  تو1952 میں ہوا جب امپیریل کرکٹ کانفرنس کی جانب سے نوزائیدہ مملکت کوعالمی کرکٹ میں اینٹری کا اجازت نامہ ملا اور پہلی سیریز روایتی حریف اور پڑوسی ملک بھارت کےساتھ کھیلی گئی ۔۔۔ لیکن پی ایس ایل کاآغاز تو قیام پاکستان کے ساتھ ہی شروع ہوگیاتھا جو  تاحال جاری ہے ۔۔۔

پی ایس ایل کا پہلا بڑا راؤنڈ 1948میں کھیلاگیاجب پاکستانی قبائلیوں نے کشمیرکی آزادی کےلیے جنگ چھیڑی اور اپنے سے کئی گنابڑی مملکت اور باقاعدہ فوج سے ٹکر لی ۔۔۔پاکستانی فوجی بھی مدد کےلیے پہنچے اور خوب مقابلہ کیا۔۔  اس راؤنڈمیں سینکڑوں شہری مین آف دی میچ قرار پائے جبکہ راجہ محمدسرورشہیدنے مین آف دی ٹورنامنٹ کاٹائٹل حاصل کیا۔۔

 

اس کےبعد پی ایس ایل کادوسرا میگا ایونٹ ستمبر 1965میں کھیلاگیا جو تقریبا17روز جاری رہا ۔سینکڑوں کھلاڑی اور شائقین مین آف دی میچ قرارپائے۔۔جبکہ  طفیل محمد اور میجرعزیزبھٹی شہید مین آف دی ٹورنامنٹ کاٹائٹل لےجانے میں کامیاب رہے ۔۔

پی ایس ایل کا تیسرا بڑاراؤنڈ1971کےدسمبر سے کھیلاگیاجس کےلیے چھوٹے چھوٹے لیگ میچز سال کے وسط سے ہی جاری تھے ۔۔ اس میگاایونٹ میں لاکھوں شہریوں اور فوجیوں نے مین آف دی میچ کااعزاز حاصل کیاتو ساتھ ہی ساتھ راشد منہاس ،میجر شبیر شریف ،محمدحسین ،محمداکرم،محمدمحفوظ نےمین آف دی ٹورنامنٹ کااعزازمشترکہ طورپر حاصل کیا۔۔۔

وقت گزراتو کرکٹ کے ساتھ ساتھ اس لیگ میں بھی جدت آئی اور یہ   شہرشہرمقبولیت پانے لگی ۔۔ خاص کردوٹیموں کے درمیان تو میچزتواترسے کھیلے جانے لگے ۔۔۔ اس سیاہ سفیدکی لڑائی میں آئے روز مین آف دی میچ کےایوارڈکثرت سے بٹنے لگے ۔۔اس کھیل کی دوسری بڑی حصہ داری زبان سے کھیلنے والی ٹیم نے اٹھائی اورعروس البلاد اور اس کے قریبی شہرمیں آئے روز میچزکاسلسلہ شروع ہوا ،یہ پی ایس ایل کی مقبولیت  کے نئے دور کا آغاز تھا،اب میچ کے انعقاد اورمین آف دی میچ کا ایوارڈپانے کےلیے برسوں کاانتظارجو نہ کرناپڑتاتھا۔۔

قریب دودہائیوں تک ایک روزہ پی ایس ایل میچز کے بعد یہ سلسلہ ٹی ٹوئنٹی دورمیں داخل ہوگیا ۔۔۔کئی کئی ہفتوں ،مہینوں بعدہونے والے میچز روز روز بلکہ کئی مرتبہ تو ایک روزمیں دو دو مرتبہ بھی کھیلے جانے لگے ۔۔۔ نئی صدی کی پہلی دہائی میں ایک محتاط اندازے کے مطابق 35ہزار کےقریب شہری اور قانون نافذکرنے والے اہلکارمین آف دی میچ قرارپاچکے تھے  جبکہ مزید پانچ برس میں مزید 20ہزار کے قریب ۔۔۔پی ایس ایل   ٹی ٹوئنٹی کےدوران  ملکی خدمت میں مصروف سیاستدانوں ،امریکی سفارت کار کی اہلیہ اور بیٹی،غیرملکی انجنیئرز،بری امام کے عرس میں شریک زائرین ،قبائلی علاقوں میں والی بال کھیلتے ہوئے جوان،دہشتگردوں سے لڑتے پاک فوج کے اعلی افسران ،پارکوں میں کھیلتے معصوم بچے ،ملک کے دفاع کےلیے مشقیں کرتے رنگروٹ،اسکولوں میں زیرتعلیم مستقبل کے معمار،یونیورسٹیوں کےنوجوان طلبہ،صوفی ازم کے پیروکار فنکار،مذہب کی تبلیغ میں مصروف علمادین ،غرض کہ ہرشعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والوں نے بڑھ چڑھ کرحصہ لیا اور شہادت کےتمغے حاصل کیے ۔۔۔

اب جو یہ بحث چلی ہے کہ آیا پی ایس ایل کافائنل لاہورمیں کھیلا جائیگا یا نہیں ۔۔یا کہ پاکستان میں پی ایس ایل کے میچز کب کھیلے جائیں گے تو ان کےلیے عرض ہے کہ پاکستان شہیدلیگ توکب سے جاری و ساری ہے ۔۔۔ اور اس کو جاری و ساری رکھنے میں اپنوں سے زیادہ غیروں نے ساتھ دیا ہے ۔۔ سو اس حوالے سے وہ بے فکر رہیں ،،یہ لیگ ہم ختم کرنا بھی چاہیں تو بھی یہ اس کو ختم کرنا مستقبل قریب میں تو ممکن نظر نہیں آتا ۔۔۔ بس دعاہے کہ میچزکےانعقاد کےدرمیانی وقفوں میں اضافہ ہی ہوجائے ۔۔۔۔آمین

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

w

Connecting to %s